چاندنی چوک ہمارا تاریخی ورثہ ہے

اس کے تحفظ کے لیے تمام ایجنسیوں کو مل کر کام کرنے کی ضرورت ہے:سسودیا

نئی دہلی، جون۔ دہلی کے نائب وزیر اعلی منیش سسودیا نے لال قلعہ سے فتح پوری مسجد تک 1.4 کلومیٹر سڑک کا اچانک معائنہ کیا اور معائنہ کے دوران نائب وزیر اعلی نے صفائی کے بہتر انتظامات نہ کرنے پر متعلقہ اتھارٹی کو پھٹکار لگائی۔انہوں نے کہا کہ دہلی کے تاریخی ورثے کو بچانے کی سمت میں، کیجریوال حکومت نے چاندنی چوک کی خوبصورتی کا کام کیا ہے۔ساتھ ہی انہوں نے کہا کہ معائنہ کے دوران معلوم ہوا کہ متعلقہ ایجنسی سڑک کی صفائی اور دیکھ بھال کے کام میں غفلت برت رہی ہے۔ اس کے علاوہ وہاں نصب بوم بیریئرز بھی کام نہیں کر رہے۔ اس پورے راستے پر موٹر گاڑیوں کے لیے سخت پابندی ہے، اس کے باوجود پولیس کی لاپرواہی کی وجہ سے یہاں دو پہیہ گاڑیوں کی آمدورفت دیکھنے میں آئی اور یہ بھی معلوم ہوا کہ اس پورے راستے پر سائیکل رکشوں کی تعداد میں بھی کافی اضافہ ہوا ہے۔ چاندنی چوک کی تزئین و آرائش اور تزئین و آرائش کے منصوبے کے تحت اس پورے حصے پر ستونوں سے لٹکی ہوئی تاروں کو انڈر گراؤنڈ کر دیا گیا ہے لیکن بعض مقامات پر دوبارہ اوور ہیڈ تاریں لٹکتی نظر آئیں۔ اس موقع پر مسٹر سسودیا نے کہا کہ چاندنی چوک دہلی کو عالمی سطح پر پہچان دیتا ہے۔ اس تاریخی ورثے کو محفوظ رکھنے کے لیے حکومت کی جانب سے یہاں تزئین و آرائش اور تزئین و آرائش کا کام کیا گیا لیکن کام یہیں ختم نہیں ہوتا، تزئین و آرائش اور تزئین و آرائش کے کام کے بعد اسے بہتر طریقے سے برقرار رکھنا بھی بہت ضروری ہے۔ جس کے لیے سب کو مل کر کام کرنے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ تمام اداروں کی مشترکہ کوششوں سے ہی ہم اپنے اس تاریخی ورثے کو محفوظ رکھنے کے لیے کام کر سکتے ہیں۔ چاندنی چوک کی تزئین و آرائش کے دوران دہلی حکومت نے سیاحوں کی سہولیات کا بہت خیال رکھا ہے۔ چاندنی چوک کو خوبصورت بنانے میں کوئی کسر نہیں چھوڑی گئی، ساتھ ہی یہاں آنے والے لوگوں کے بیٹھنے کے لیے سڑک کے دونوں جانب انتظامات کیے گئے ہیں لیکن یہاں صفائی کا خیال نہیں رکھا جا رہا ہے۔ اس بدانتظامی پر نائب وزیر اعلی نے عہدیداروں کو پھٹکار لگائی کی اور انہیں اسٹریچ پر نصب سی سی ٹی وی کیمروں کی فوٹیج فراہم کرنے کی ہدایت دی جس کے ذریعہ یہ دیکھا جاسکتا ہے کہ اس سٹریچ کی باقاعدگی سے صفائی کی جارہی ہے یا نہیں اور ساتھ ہی اس کی دیکھ بھال بھی کیا اقدامات کئے جارہے ہیں۔اس کے لیے نائب وزیر اعلیٰ نے پی ڈبلیو ڈی کے پرنسپل سکریٹری کو بھی ہدایت دی کہ وہ اس پورے سلسلے کی نگرانی کریں اور اس سے متعلق رپورٹ پیش کریں۔

Advertisement

 

Advertisement

Related Articles