عادل رشید انگلینڈ کی ٹیسٹ ٹیم کے کوچ کے طور پر میک کولم کے ساتھ واپس آسکتے ہیں

لندن، جون۔انگلینڈ کی ٹیسٹ ٹیم کے ہیڈ کوچ کے طور پر برینڈن میک کولم کی تقرری سے 34 سالہ اسپنر عادل راشد کی ٹیسٹ ٹیم میں واپسی کی امید پیدا ہوئی ہے۔ لیگ اسپنر نے آخری بار انگلینڈ کے لیے جنوری 2019 میں بارباڈوس میں ویسٹ انڈیز کے خلاف ٹیسٹ کھیلا تھا اور اسے لگتا ہے کہ کوچ میک کولم اور کپتان بین اسٹوکس کے پاس نئی ٹیم کے لیے اچھا وقت ہوسکتا ہے۔ ڈیلی میل کے مطابق، ”راشد نے محدود اوورز کی کرکٹ میں کامیابیوں کا سلسلہ جاری رکھا ہوا ہے۔ ورلڈ کپ جیت کر انگلینڈ کے لیے سب سے زیادہ ٹی ٹوئنٹی وکٹیں لینے والے بولر بن گئے، میک کولم کے ٹیسٹ ٹیم کے کوچ کا عہدہ سنبھالنے کے بعد وہ ٹیم میں واپس آئے۔’رپورٹ میں راشد کے حوالے سے کہا گیا ہے، ’’جب کچھ نیا ہوتا ہے تو یہ ہمیشہ پرجوش ہوتا ہے۔ برینڈن میک کولم اور بین اسٹوکس دونوں ہی مثبت اور جارحانہ ہونا پسند کرتے ہیں۔ یہ مجھے متاثر کرتا ہے اور یہ بہت پرجوش ہے۔” معین علی، جنہوں نے حال ہی میں گزشتہ سال ٹیسٹ کرکٹ سے ریٹائرمنٹ لے کر اپنے وائٹ بال کیریئر کو کمباکرنے کے لیے کہا تھا، یہ بھی کہا تھا کہ اگر انگلینڈ کے نئے ٹیسٹ کوچ چاہیں تو انھیں سنیاس سے باہر آنے میں کوئی اعتراض نہیں ہوگا۔ 20 جنوری سے باہر راشد کو 1919 میں بارباڈوس میں ویسٹ انڈیز کے خلاف اپنا 19 واں ٹیسٹ کھیلنے کے بعد آرام دیا گیا تھا، کیونکہ ٹیم کی شکست میں انہوں نے 117 رنز دے کر کوئی وکٹ نہیں لی تھی۔ انٹیگوا میں ان کی جگہ تیز گیند باز اسٹورٹ براڈ کو شامل کیا گیا۔ اس کے بعد راشد نے گھر پر ورلڈ کپ کی تیاری شروع کر دی اور باقی تاریخ ہے۔

Advertisement

Related Articles