سپریم کورٹ: بھوشن کی رائے مزید اشتعال انگیز ہے، اے جی نے کہا، معاف کر دیجئے

نئی دہلی،سپریم کورٹ نے منگل کو سینئر وکیل پرشانت بھوشن کے خلاف توہین کیس کی سماعت کے دوران اٹارنی جنرل (اے جی) سے کہا کہ بھوشن کی عدالت کے زوال سے متعلق تبصرہ قابل اعتراض ہے، لیکن ان کا عدالت میں جواب اس سے بھی زیادہ اشتعال انگیز ہے. اٹارنی جنرل کے. کے. وینو گوپال نے سپریم کورٹ سے پرشانت پر نرمی برتنے کا مطالبہ کرتے ہوئے گزارش کی کہ بھوشن کو انتباہ دے کر چھوڑ دیا جائے. اس پر بنچ نے اے جی سے پوچھا، بھوشن کو انتباہ کا کیا فائدہ ہے، جو سوچتے ہیں کہ انہوں نے کچھ بھی غلط نہیں کیا ہے؟ وینو گوپال نے جواب دیا کہ ان کی رائے پر غور نہیں کیا جانا چاہئے. جسٹس ارون مشرا کی صدارت والی بنچ نے کہا، “ہم کیسے نہیں کر سکتے؟ ہر کوئی ہماری تنقید کر رہا ہے کہ ہم نے اس کے رد عمل پر غور نہیں کیا ہے.” بنچ نے کہا کہ اس کے مطابق بھوشن کی رائے اور بھی اشتعال انگیز ہے. جب اے جی نے زور دے کر کہا کہ بھوشن دوبارہ ایسا نہیں کریں گے. اس پر جسٹس مشرا نے کہا، انہیں خود یہ کہنے دیں. وینو گوپال نے عدالت سے بھوشن کو معاف کرنے کی اپیل کی اور کہا کہ انہیں سزا دینا ضروری نہیں ہے. عدالت نے اے جی کو بتایا کہ ایڈووکیٹ بھوشن کے خلاف ایک سال پہلے صرف ایک غلط الزام کے لئے توہین کی کارروائی شروع کی تھی اور افسوس کا اظہار کرنے کے بعد ہی اسے واپس لے لیا تھا، لیکن یہاں ایسا نہیں ہے. اے جی نے بنچ کے سامنے پیش کیا کہ بھوشن نے 2009 کے معاملے میں افسوس کا اظہار کیا ہے اور انہیں اس معاملے میں بھی ایسا کرنے کی اجازت دی جانی چاہئے. عدالت عظمیٰ نے بھوشن کو دو ٹویٹ کے ذریعے عدلیہ کے خلاف اشتعال انگیز بیان دینے کے لئے مورد الزام ٹھہرایا ہے. بھوشن نے معافی مانگنے سے انکار کر دیا ہے. جسٹس مشرا نے بھوشن کے جواب پر اشارہ کرتے ہوئے اے جی سے کہا، براہ مہربانی ان کا جواب پڑھیں اور دیکھیں کہ انہوں نے کیا کہا ہے کہ عدالت کا زوال ہو گیا ہے. بنچ نے اے جی سے کہا، “کیا یہ قابل اعتراض نہیں ہے؟” معاملے پر سماعت جاری ہے.

Related Articles