ملک کے باشندے میڈ ان انڈیا کو ایک عوامی تحریک بنائیں: مودی

نئی دہلی ، اکتوبر ۔ وزیر اعظم نریندر مودی نے 100 کروڑ کووڈ ویکسین کے حوالے سے ہندوستانی دیسی ویکسین پروگرام کی کامیابی کے ساتھ معاشی ترقی کی اشارات کا ذکر کرتے ہوئے آج ملک کے باشندوں سے میڈ ان انڈیا کو ایک عوامی تحریک بنانے کی اپیل کیا۔ میڈ ان انڈیا کو ایک عوامی تحریک بنائیں اور دیسی ساختہ اشیاء خریدنے کو اپنےمعمول میں لائیں۔ جمعہ کی صبح قوم سے اپنے خطاب میں مسٹر مودی نے کہا کہ ویکسین کی بڑھتی ہوئی کوریج کے ساتھ ، ہر شعبے میں مثبت سرگرمیاں تیز ہو رہی ہیں۔ آج چاروں طرف اعتماد ، جوش اور امنگ کی فضا ہے۔ سو کروڑ ویکسین کے ساتھ ، ہندوستان کو آج ایک زیادہ محفوظ ملک کے طور پر دیکھا جا رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ماہرین اور اندرون اور بیرون ملک سے کئی ایجنسیاں ہندوستان کی معیشت کے بارے میں بہت مثبت ہیں۔ آج ہندوستانی کمپنیوں میں نہ صرف ریکارڈ سرمایہ کاری ہو رہی ہے بلکہ نوجوانوں کے لیے روزگار کے نئے مواقع بھی پیدا ہو رہے ہیں۔ اسٹارٹ اپس میں ریکارڈ سرمایہ کاری کے ساتھ ، ریکارڈ اسٹارٹ اپس، یونیکارن بن رہے ہیں۔ اصلاحات کے ساتھ ساتھ ’گتی شکتی‘ اور ڈرون پالیسی بھی ہندوستان کی معیشت کو فروغ دینے والی ہے۔ زراعت کے شعبے نے کورونا کے دور میں ہماری معیشت کو مضبوطی سے سنبھالے رکھا۔ آج ، ریکارڈ سطح پر اناج کی خریداری کی جا رہی ہے۔ رقم براہ راست کسانوں کے بینک اکاؤنٹ میں جا رہی ہے۔مسٹر مودی نے کہا ، ’پچھلی دیوالی ہر کسی کے ذہن میں ایک تناؤ تھا لیکن یہ دیوالی 100 کروڑ ویکسین کی خوراک کی وجہ سے پیدا ہونے والا ایک یقین ہے۔ اگر میرے ملک کی ویکسین مجھے تحفظ فراہم کر سکتی ہے تو میرے ملک میں تیار کردہ سامان میری دیوالی کو مزید شاندار بنا سکتے ہیں‘۔وزیر اعظم نے کہا ،’میں آپ سے پھر کہوں گا کہ ہمیں ہر چھوٹی سے چھوٹی چیز خریدنے پر اصرار کرنا چاہیے ، جو کہ میڈ ان انڈیا ہے ، جسے بنانے کے لیے ایک ہندوستانی پسینہ آتا ہے۔ اور یہ سب کی کوششوں سے ہی ممکن ہوگا: جس طرح سوچھ بھارت مہم ایک عوامی تحریک ہے ، اسی طرح ہندوستان میں بنی ہوئی چیزیں خریدنا ، ہندوستانیوں کی بنائی ہوئی چیزیں خریدنا ووکل فار لوکل ہونا ، یہ ہمیں معمول میں لانا ہی ہوگا۔انہوں نے کہا کہ ہندوستان کا مکمل حفاظتی ٹیکہ پروگرام سائنس کے بطن میں پیدا ہوا ، سائنسی بنیادوں پر تیار ہوا اور سائنسی طریقوں سے چاروں سمتوں میں پہنچا۔ یہ ہم سب کے لیے فخر کی بات ہے کہ ہندوستان کا پورا ویکسینیشن پروگرام سائنس سے پیدا، سائنس سے متاثر اور سائنس پر مبنی رہا ہے۔ کوون پلیٹ فارم کا نظام جو ہمارے ملک نے بنایا ہے وہ بھی دنیا میں توجہ کا مرکز ہے۔ ہندوستان میں بنائے گئے اس پلیٹ فارم نے نہ صرف عام لوگوں کو سہولت فراہم کی ہے بلکہ صحت کے کارکنوں کے کام کو بھی آسان بنا دیا ہے۔انہوں نے کہا کہ اس مشکل اور غیر معمولی کامیابی نے ثابت کیا ہے کہ ملک بڑے اہداف کو کیسے طے کرنا اور انہیں حاصل کرنا جانتا ہے۔ لیکن اس کے لیے ہمیں مسلسل محتاط رہنے کی ضرورت ہے۔ ہمیں غافل نہیں ہونا چاہیے۔ لوگوں کو کووڈ کے حوالے سے احتیاطی تدابیر اختیار کرنے کا مشورہ دیتے ہوئے ، انہوں نے کہا ،’کتنا ہی عمدہ تحفظ، کتنا ہی جدید ہتھیار کیوں نہ ہو ، تحفظ (ویکسین وغیرہ) سے تحفظ کی مکمل ضمانت ہے ، تب بھی جب تک جنگ جاری ہے ، ہتھیار نہیں رکھے جاتے۔ میری گذارش ہے کہ ہمیں اپنے تہوار انتہائی احتیاط سے منانا ہے۔انہوں نے کہا کہ جس طرح ہم گھر سے باہر جاتے ہوئے جوتے پہنتے ہیں ، اسی طرح ماسک کو بھی آرام دہ رویہ بنانا ہوگا‘ جن کو ویکسین نہیں دی گئی ہے انہیں لازمی طور پر ماسک لگانا ہوگا۔مسٹر مودی نے خطاب کا آغاز کرتے ہوئے کہا کہ جمعرات 21 اکتوبر کو ہندوستان نےایک بلین، 100 کروڑ ویکسین کی خوراک کا مشکل لیکن غیر معمولی ہدف حاصل کر لیا ہے۔ اس کامیابی کے پیچھے 130 کروڑ ہم وطنوں کا قوت عمل ہے لہذا یہ کامیابی ہندوستان کی کامیابی ہے ، ہر ملک کے باشندے کی کامیابی ہے۔انہوں نے کہا کہ ہم نے وبا کے خلاف ملک کی لڑائی میں عوامی شراکت کو اپنی پہلی طاقت بنایا۔ جب ملک نے توانائی دینے کے لیے تالی، تھالی بجائی، دیپ جلائے تب کچھ لوگوں نے کہا تھا کہ کیا اس سے بیماری بھاگ جائے گی لیکن ہم سبھی کو اس میں ملک کی یکجہتی نظر آئی، اجتماعی قوت کی بیداری نظر آئی۔ مسٹر مودی نے کہا کہ آج بہت سے لوگ ہندوستان کے ویکسینیشن پروگرام کا موازنہ دنیا کے دیگر ممالک سے کر رہے ہیں۔ جس رفتار سے ہندوستان نے 100 کروڑ کا ہندسہ عبور کیا ، ایک ارب کے اعداد و شمار کو پار کیا، اس کی ستائش بھی ہو رہی ہے۔ تاہم ، اس تجزیے میں ایک بات اکثر یاد آتی ہے کہ ہم نے کہاں سے آغاز کیا ہے۔ دنیا کے دوسرے بڑے ممالک کے لیے ویکسین پر ریسرچ کرنا، ویکسین ڈھونڈنا، اس میں دہائیوں سے ان کی مہارت ہے۔ ہندوستان زیادہ تر ان ممالک کی بنائی ویکسین پر ہی منحصر رہتا تھا۔ انہوں نے کہا ، ’جب 100 سال کی سب سے بڑی وبا آئی تو ہندوستان پر سوالات اٹھنے لگے۔ کیا ہندوستان اس عالمی وبا سے لڑ پائے گا؟ ہندوستان کو دوسرے ممالک سے اتنی ویکسین خریدنے کے لیے پیسہ کہاں سے ملے گا؟ ہندوستان کو ویکسین کب ملے گی؟ کیا ہندوستان کے عوام کو ویکسین ملے گی یا نہیں؟ کیا ہندوستان وبا کو پھیلنے سے روکنے کے لیے کافی لوگوں کو ویکسین دے سکے گا؟ مختلف سوالات تھے ، لیکن آج یہ 100 کروڑ ویکسین کی خوراک ہر سوال کا جواب دے رہی ہے۔وزیراعظم نے کہا کہ کورونا وبا کے آغاز میں یہ بھی اندیشے ظاہر کیے جا رہے تھے کہ ہندوستان جیسی جمہوریت میں اس وبا سے لڑنا بہت مشکل ہو گا۔ ہندوستان کے لیے یہ بھی کہا جا رہا تھا کہ ہندوستانی عوام کے لیے کہ یہاں اتنا زیادہ تحمل ، اتنا نظم و ضبط کیسے چلے گا؟ لیکن ہمارے لیے جمہوریت کا مطلب ہے ’سب کے ساتھ‘۔ سب کو ساتھ لے کر ، ملک نے ’سب کو ویکسین مفت ویکسین‘ کی مہم شروع کی۔ غریب امیر ، گاؤں شہر ، دور دراز، ملک کا ایک ہی طریقہ کار رہا کہ اگر بیماری امتیازی سلوک نہ کرے تو ویکسین میں کوئی امتیاز نہیں ہو سکتا لہذا ، اس بات کو یقینی بنایا گیا کہ وی آئی پی کلچر ویکسینیشن مہم پر حاوی نہ ہو۔

Advertisement

Related Articles