سپریم کورٹ کا محرم کے جلوس کی اجازت دینے سے انکار

نئی دہلی، سپریم کورٹ نے محرم کے جلوسوں کے لئے اجازت دینے سے جمعرات کو انکار کردیا اور کہا ہے کہ اس سے انارکی پھیلے گی اور ایک خصوصی برادری کو ہدف بنانے میں اضافہ ہوگا۔
اترپردیش کے اہم شیعہ لیڈر سید کلب جواد کی مفاد عامہ کی عذرداری کی سماعت کرتے ہوئے عدالت نے یہ حکم دیا۔
چیف جسٹس ایس اے بوبڈے کی صدارت والی تین ججوں کی بنچ نے عذرداری پر سماعت کرنے سے انکار کرتے ہوئے کہا کہ ’’ہم کوئی حکم نہیں دینا چاہتے۔ ہم عذرداری پر غور نہیں کرنا چاہتے۔‘‘
دراصل اس عذرداری میں 30 اگست کو محرم کے موقع پر جلوس نکالنے کے لئے مسلمانوں کے شیعہ برادری کے لئے اجازت طلب کی گئی تھی۔ جب عرضی گذار نے پوری رتھ یاترا کی اجازت کا حوالہ دیا تو عدالت عظمی نے کہا کہ یہ یاترا ایک نقطے سے دوسرے نقطے تک ایک ہی مقام پر تھی۔ عدالت نے کہا ’’لیکن آپ پورے ہندوستان کے لئے اجازت مانگ رہے ہیں۔‘‘
عدالت نے کہا کہ اس سنگین کورونا وبا کے دوران محرم کے جلوسوں کو نکالنے سے غیرضروری طور سے برادری کا نام خراب ہوگا۔
عرضی گذارنے جب درخواست کی کہ چونکہ شیعہ لکھنؤ میں مرکوز ہیں اس لئے وہاں اجازت دی جائے تو عدالت عظمی نے انہیں الہ آباد ہائی کورٹ جانے کو کہا۔

Advertisement

Related Articles