ادھیر رنجن چودھری ریاستی کانگریس کے صدر کا عہدہ چھوڑ سکتے ہیں

کلکتہ ،جون۔کانگریس ہائی کمان پارٹی کی نئی شکل دینے میں مصروف ہیں۔پارٹی نے ایک شخص ایک عہدہ کا قانون متعارف کرایا ہے۔اس کی وجہ سے یہ قیاس آرائی کی جارہی ہے کہ ادھیر رنجن چودھری جو ریاستی کانگریس کے صدر ہونے کے ساتھ ساتھ لوک سبھا میں اپوزیشن لیڈر، پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کے چیرمین بھی ہیں اس لئے انہیں ریاستی کانگریس کی صدارت کا عہدہ چھوڑنا پڑسکتا ہے۔پارٹی ذرائع کے مطابق پارٹی کا انہیں اپوزیشن لیڈر کے عہدے سے ہٹانے کا کوئی منصوبہ نہیں ہے۔ اس صورت میں ادھیر چودھری کو ریاستی صدر کے عہدے سے استعفیٰ دینا پڑ سکتا ہے۔ لیکن اگلا صدر کون ہوگا اس کا انحصار پارٹی اعلیٰ کمان کی حکمت عملی پر ہے۔قومی سیاست میں کانگریس تمام بی جے پی مخالف سیاسی جماعتوں کو ایک ہی دائرے میں لانا چاہتی ہے۔ وہی حکمت عملی باقی ہے۔ لیکن ریاستی سیاست میں بائیں بازو کانگریس اتحاد کا کوئی سیاسی نتیجہ نہیں نکلا ہے۔دوسری طرف کانگریس کے ساتھ اتحاد نہ ہونے کے باوجود بائیں بازو بی جے پی کو پیچھے چھوڑ کر دوسرے نمبر پر آگئی ہے۔اس کی وجہ سے بائیں بازو کے کیمپ میں کانگریس کے ساتھ براہ راست اتحاد میں دلچسپی بہت کم ہوگئی ہے۔ 15 بائیں بازو کی جماعتوں کو اکٹھا کرنے کا پروگرام بھی بنایا گیا ہے۔ مستقبل میں اسے مزید مضبوط بنانے کا مطالبہ بھی کیا جا رہا ہے۔سیاسی ماہرین کے ایک حصے کے مطابق، ادھیر چودھری کے ریاستی صدر بننے کے بعد سے کانگریس بنگال میں کمزور ہوئی ہے۔ اس لیے اس صورت میں کانگریس نئے صوبائی صدر کی تقرری کی راہ پر چل پڑے گی۔ اور اسی پر ریاست میں کانگریس کی مستقبل کی سیاسی حکمت عملی کا انحصار ہوگا۔ادے پور میں پارٹی کے ‘نب سنکلپ کیمپ کے بعد کانگریس قیادت تنظیم میں بڑی تبدیلی کرنا چاہتی ہے۔ مسلسل پانچ سال سے زائد عرصے تک کسی بھی عہدے سے استعفیٰ دینے یا ‘ایک شخص، ایک عہدہ کی پالیسی پر عمل پیرا رہنے کے پیغام کے علاوہ اس بار ہر سطح پر کمیٹیاں بنانے یا 50 سال سے کم عمر والوں کے لیے 50 فیصد نشستیں رکھنے کی بات کی جا رہی ہے۔ اے آئی سی سی کی پانچ نکاتی تنظیمی پالیسی کے خاکے میں کہا گیا ہے کہ کوئی بھی پانچ سال سے زیادہ ایک ہی عہدے پر نہیں رہ سکتا۔ شنکر ملاکر، نیپال مہاتو، موہت سینگپتا، تاپس مجمدار جیسے لیڈر طویل عرصے سے ضلع صدر کے عہدہ پر ہیں۔ ان کے معاملے میں، کانگریس میں اب بھی بحث کر رہی ہے کہ آیا اس نئی تنظیمی پالیسی کو لاگو کرنے کے لیے کیا اقدامات بہتر ہوں گے۔

Advertisement

Related Articles